Tue. Jun 4th, 2019

چائنا میں ٹیسلا کی میگا فیلٹری سے پاکستانی آٹوانڈسٹری کوکیا فائدہ ہوگا؟

اس وقت آٹوانڈسٹری میں چین کے اقتصادی دارالحکومت شنگھائی میں ٹیسلا کی نئی فیکٹری کی خبریں عروج پر ہیں 2020 تک 1 ملین گاڑیوں کے ہدف کیساتھ یہ فیکٹری فریموٹ کیلیفورنیا میں واقع  ٹیسلا کی موجود اسمبلی لائن کی پیداوری گنجائش کو بھی پیچھے چھوڑ دی گی اسسے بھی دلچسپ ٹیسلا کا چین پروجیکٹ ہے جس کے نتیجے میں ادرا ممکنہ طور پر پاکستان کی مارکیٹ میں داخل ہوگا 

دو ارب ڈالرز کا یہ منصوبہ تیزی سے آگے بڑہ رہا ہےادراہ پہلے ہی کلیدی عہدوں کیلئے با صلاحیات افراد کی ٹلاش شروع کر رہا ہے کی امریکا سے باہر ادارے کی پہلی پروڈکشن لائن کو کون چلائے گا لیکن پاکستان کے پڑوس میں اس میگا فیکٹری کا قیام ہمارے لیئے کیا معنی رکھتا ہے؟

پاک چین اقتصادی راہداری کم از کم چند مارکیٹوں کیلئے فراہم کا راستہ تو بن سکتی ہے اس لئیے ٹیسلا کا پاکستان میں اجرا  کی مظبوط وجوہات ہیں اس وقت میں جب حکومت غیر ملکی ایندہن کی خریداری میں کمی کے ذریعے اپنی درآمدی بل کو کم کرنے کی کوشش کر رہی ہے الیکٹرک گاڑیاں کم کسٹمز اور ٹیکسز رکھتی ہیں تو آنے والی دہائیوں میں یہ رحجان ممکنہ طور پر جاری رہ سکتا ہے ٹیسلا برقی گاڑیوں میں مارکیٹ رہنما کا درجہ رکھتا ہے اور ناقابل شکست ہے اگر درآمدی ٹیکس اسی طرح رعایتیں جاری رہی جیسا کہ اب ہیں تو پاکستان کے شہری مراکز میں ٹیسلا کی طلب اور کمرشل مقبولیت بہت زیادہ ہو گی 

موجودہ الیکٹرک کار مارکیٹ زیادہ تر لگژری سیکٹرکی جانب رحجان رکھتی ہے لیکن حالات تیزی سے     جیسی پلگ ان ہائبرڈ  PHEV تبدیل ہو رہے ہیں  عوام کی بجٹ الیکٹرک کاروں اور نسان لیف اور ٹویٹا 

میں  دلچسپی کیساتھہ یہ ٹیکنالوجی ممکنہ طور پر زیادہ  قابل رسائی ہے اور ٹیسلا بالخصوص اس کے ابتدائی نوعیت کے ماڈل 3 کیلئے زبردست طلب پیدا کری گی پاکستان میں بجلی سے چھلنی والی گاڑیون کی واضع موجودگی کی وجہ سے بی ایم ڈبلیو کی جانب سے بنائے گے  کار چارجنگ  اسٹیشنز  ملک کے بڑے شہروں میں عام ہو رہے ہیں  اگر یہ رحجان جاری رہتا ہے تو پاکستان میں ٹئسلا رکھنے کے امکانات میں اضافہ ہو گااگر ٹیسلا ہمارے پڑوس میں تیار ہو گی اس کسٹمز اور ٹکسیشن میں رعایتیں ملیں گی 

زوار اعوان

Please follow and like us:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *